پاسِ وفا نہیں کیا، اس نے بجا، نہیں کیا

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ



پاسِ وفا نہیں کیا، اس نے بجا، نہیں کیا
تُو نے بھی اپنے ساتھ کچھ کم تو برا نہیں کیا

اصلِ نصاب ایک شب، عمر لٹا دی سود میں
پھر بھی یہی گلہ رہا، قرض ادا نہیں کیا...

حالتِ جبر میں عجب وصل کیا ہے اختیار
ذکرِ ترا تمام عمر خود سے جدا نہیں کیا

کوزہ گری کے نام پر مجھ کو گھڑا گیا تھا کیوں
کوزہ گری کے نام پر اُس نے بھی کیا نہیں کیا

حرصِ نجات کفر تھی، خاک میں خاک ہو گئے
شوقِ وصالِ حور میں ذکرِ خدا نہیں کیا

اوجِ ملال و رنج میں ہم کو انا رہی عزیز
درد بلند کر لیا دستِ دعا نہیں کیا

دل نے لہو کی آخری بوند بھی صدقہ وار دی
خاکِ شفا بنا گیا، ردِّ بلا نہیں کیا

Enhanced by Zemanta

Comment on this post