ضابطہ ہے کہ باطل کو مت کہوں باطل

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ



ضابطہ ہے کہ باطل کو مت کہوں باطل
یہ ضابطہ ہے کہ گرداب کو کہوں ساحل

یہ ضابطہ ہے بنوں دست و بازو ئے قاتل
یہ ضابطہ ہے دھڑکنا بھی چھوڑ دےیہ دل...

یہ ضابطہ ہے کہ غم کو نہ غم کہا جائے
یہ ضابطہ ہے ستم کو کرم کہا جائے

بیاں کروں نہ کبھی اپنی دل کی حالت کو
نہ لاؤں لب پہ کبھی شکوہ و شکایت کو

کمالِ حسن کہوں عیب کو جہالت کو
کبھی جگا وں نہ سوئ ہوئ عدالت کو

یہ ضابطہ ہے حقیقت کو اک فسانہ کہوں
یہ ضابطہ ہے قفس کو بھی آشیانہ کہوں

یہ ضابطہ ہے کہوں دشت کو گلستاں زار
خزاں کے روپ کو لکھوں فروغ حسن بہار

ہر ایک دشمن جاں کو کہوں میں ہمدم و یار
جو کاٹتی ہے سرِ حق ، وہ چوم لوں تلوار

خطا و جرم کہوں اپنی بے گناہی کو
سحر کا نور لکھوں رات کی سیاہی کو

جو مٹنے والے ہیں ان کے ليئے دوام لکھوں
ثنا ء یزید کی اور شمر پر سلام لکھوں

جو ڈس رہا ہے وطن کو نہ اس کا نام لکھوں
سمجھ سکیں نہ جسے لوگ وہ کلام لکھوں

دروغ گو ئ کو سچائ کا پیام کہوں
جو راہ زن ہے اسے رہبر عوام کہوں

میرے جنوں کو نہ پہنا سکو گے تم زنجیر
نہ ہو سکے گا کبھی تم سے میرا ذہن اسیر

جو دیکھتا ہوں جو سچ ہے کروں گا وہ تحریر
متاع ہر دو جہاں بھی نہیں بہائے ضمیر

نہ دے سکے گي سہارہ تمہیں کو ئ تدبیر
فنا تمہار ا مقد ر بقا میری تقدیر

Published on Urdu poetry, Urdu, Pakistan, Karachi

Comment on this post