شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خو ف آتا ہے......افتخار عارف.

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ

شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خو ف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اُسی خاک سے خوف آتا ہے

شکل بننے نہیں پا تی کہ بگڑ جا تی ہے
نئی مٹی کو ابھی چا ک سے خوف آتا ہے...
ہرِ گل کے خس و خاشاک سے خو ف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اُسی خاک سے خوف آتا ہے

شکل بننے نہیں پا تی کہ بگڑ جا تی ہے
نئی مٹی کو ابھی چا ک سے خوف آتا ہے

وقت نے ایسے گھمائے افق آفاق کہ بس
محورِ گردشِ سفّا ک سے خوف آتا ہے

یہی لہجہ تھا کہ معیار سخن ٹھہرا تھا
اب اسی لہجۂ بے باک سے خوف آتا ہے

آگ جب آگ سے ملتی ہے تو لو دیتی ہے
خاک کو خاک کی پو شاک سے خوف آتا ہے

قامتِ جاں کو خوش آیا تھا کبھی خلعتِ عشق
اب اسی جامۂ صد چاک سے خوف آتا ہے

کبھی افلاک سے نا لوں کے جواب آتے تھے
ان دنوں عالمِ افلاک سے خوف آتا ہے

رحمتِ سیدِ لولاک پہ کامل ایمان
امتِ سیدِ لولاک سے خوف آتا ہے

شاعر : افتخار عارف

Comment on this post