اے گردشِ ایام ۔۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں........عبد الحمید عدم

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ



ہے ابھی جام ۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں
اے گردشِ ایام ۔۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں

ساقی تجھے اِک تھوڑی سی تکلیف تو پو گی
ساغر کو ذرا تھام ۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں...

پہلے بڑی رغبت تھی ۔۔۔۔۔ ترے نام سے مجھ کو
اب سن کے ترا نام ۔۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں

ادراک ابھی پورا تعاون نہیں کرتا
دے بادہ گلفام ۔۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں

حل کچھ تو نکل آئے گا ۔۔۔۔۔۔ حالات کی ضد کا
اے کثرت آلام ۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں

پھر آج عدم شام سے غمگیں ہے طبیعت
پھر آج سرِ شام ۔۔۔۔۔۔ میں کچھ سوچ رہا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عبد الحمید عدم

Comment on this post